موسمی پھلوں کے فوائد

 

 

Mariya Iqbal
Manager HR
P M B M C
@Manager HR

 

 

سال بھر میں مختلف قسم کے پھل غذائیت سے بھرپور اورمختلف ذائقوں میں موجود ہوتے ہیں۔ جب بھی کسی موسمی پھل کا ذکر کیا جاتا ہے تو اس کا مطلب ہے کہ سال کے اس وقت وہ پھل ذائقہ یا فصل کے لحاظ سے عروج پر ہے۔ اور موسمی اعتبار سے اس کو کھانا ایک صحت مند ، معاشی اور ماحول دوست طریقہ ہے۔ موسمی طور پر کھانے کا سب سے اہم فائدہ صحت سے متعلق ہے۔

پھل نہ صرف ناشتے کا صحت مند متبادل ہے کیونکہ یہ بھرپور غذائیت کا حامل ہے، درحقیقت آپ کے تحول کو بھی فروغ دیتا ہے۔ جب آپ وزن کم کر رہے ہوں یا وزن کم کرنے والی غذا پر ہوں تو موسمی پھلوں کا استعمال خاص طور پر مددگار ثابت ہوتا ہے۔موسم سرما میں زیادہ ترشہ پھل دستیاب ہوتا ہے جس میں خاص طور پر وٹامن سی موجود ہے جو کہ نزلہ زکام جیسے انفیکشن سے بچنے کیلئے بہت ضروری ہے۔ جبکہ موسم گرما کے پھل ہمیں اضافی بیٹاکیروٹیناور دیگر کیروٹینائڈ فراہم کرتے ہیں جو سورج سے پہنچنے والے نقصان سے حفاظت کےلئے ہماری مدد کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ پھلوں میں فائٹو کیمیکلز اور اینٹی آکسیڈینٹ ہوتے ہیں جس سے جسم میں آزاد ڑیڈیکلز اور بیماریوں سے لڑنے میں مدد ملتی ہے۔

موسمی پیداوار میں تازگی پھلوں کے معیار ، ساخت اور ذائقہ میں دیکھی جاتی ہے۔ جو فصل موسم میں تیار ہوتی ہے اس کی کٹائی عروج پر ہوتی ہے، اس پھل کو محفوظ کرنا بھی آسان رہتا ہے کیونکہ اس کی کھاد ڈالنے کے لئے کم کیمیکلز کی ضرورت ہوتی ہے اور درجہ حرارت کے ساتھ ساتھ ا ردگرد کے ماحول کو متوازن رکھنے کیلئے کم توانائی استعمال کی جاتی ہے ۔ محدود وقت پر ترسیل ہونے سے پھل بھی تازہ رہتا ہے۔ موسمی طور پر پھل کھانا نہ صرف صحت کے لئے اچھا ہے بلکہ بجٹ کے لحاظ سے بھی مناسب رہتا ہے ۔اگر پھل مقامی طور پر موسم میں ہو تو پیداوار کی لاگت کم ہوتی ہے جو کہ گروسری سٹورز پر قیمتوں کو کم کرنے کا باعث بنتا ہے۔موسمی پھلوں کے انتخاب کے فوائد میں مقامی کاشتکاروں اور پروڈیوسرز کے لئے بھی تعاون شامل ہے۔

آپ کا پیسہ براہ راست ان کے پاس جاتا ہے اور کھانے کے زیادہ پائیدار طریقے کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ ایک زمانے میں لوگ صرف تازہ اور موسمی پھل کھانے کو ہی ترجیح دیتے تھے کیونکہ اس طرح کی کاشتکاری ان کے بقاء کا واحد راستہ تھا۔ موسمی پھلوں کا انتخاب فطرت کی قدرتی تالوں سے دوبارہ مربوط ہونے میں بھی ہماری مدد کرتا ہے۔ لہذا آپ موسم گرما کے آڑو اور آموں سے جتنا ہو سکے لطف اٹھائیں ، پس جلد ہی پھر موسم سرما کی مسمی کی بہار دل کو چھونے کے لئے آجائے گی۔